Friday, August 18, 2017

Reformative Minds

THE ROAD LESS TRAVELLED 
If the stages of human civilization throughout time could be illustrated, an arc would certainly do justice to the expression of volatility in human thought. An arc similar to a pendulum’s arcHumanity has, in a continuous search for balance, travelled back and forth from extremes and in this journey there has always been a time when the pendulum of our existence on its way back from one extreme has bought forth minds; unique, progressive and visionary. Minds who went on to become the greatest sources of reform and reconstruction throughout human history.
It’s quite significant to note here that what sets these minds apart from an average mind of their time is the flexibility of thought in dealing with truths, events and circumstances. Being progressive is actually more of an approach which makes human beings sift through all the lies and reveal the truth in a way most pertinent to that time. An approach which grounds human thought firmlyonto a universal plane of existence. The eternal. An eternalrealm too great for a single mind to ever comprehend or see. A realm where all truths merge in to a greater truth. Where all differences end. A realm intangible even to the human mind and intelligible only to those who dare to believe and have faith.Iqbal asserts that
the eternal gives us a foothold in the world of perpetual change”
It is this world of perpetual change which constitutes our reality. A reality transient in its essence. This very nature of our reality makes selective vision and incompatibility between different modes of human thought an inevitability. This inevitable limitation becomes a requisite to grapple with our transient reality yet without a grounding in the eternal, this very limitation has the capacity to drive humankind to extremes.
Ours is a time when human thought has evolved yet again to an extent unprecedented. Technology and globalization have not only affected our modes of living but our modes of thinking as well. Modern modes of communication have our minds hooked onto instant stimulation and responseRewiring our thought process completely. Instant gratification makes us yearn for more and quick. Since the objective reality is bound by natural factors which slow down instantaneous response, the modern human mind encounters stress and anxiety when not gratified. In consequence turning our minds into media dependent addicts for instant gratification. The vicious cycle continues and the human mind becomes a tool to project a reality controlled by manipulative mindsets.
This kind of thought process has made hatred, discrimination, violence and oppression widespread. Selective vision giving birth to selective ‘isms’ and other “schisms”; recreating and destroying simultaneously.
What we need to do is respond to them with reason and wisdom, an effort that might help us revitalize the intellectual dynamism of our earliest generations” 
professes Mustafa Akyol to those who desire to deal with abhorrent ideologies in a manner most dynamic, tolerant and peaceful.


This is where the reconstruction of human thought becomes essential. Human thought reconstructed to encompass a peaceful union of all reformative forces in the modern world. Religious and non-religious. A renewal of thought resulting in a reformation of reality A reality cognizant of the natural, the universal. A reality constructive and progressive without a need for monopoly.
The selective/biased nature of human thought compels us to reconcile with diversity in opinion. We come to terms with the realization that the main objective of reconstructing thought is not in the resolution of all differences rather it is in an acceptance of equitable co-existence with them. This plurality of thought translates into a more uniform reality, urging us to look deeper. To go beyond this ephemeral world into the eternal.Tariq Ramadan expresses this with a distinct profundity:
“We are heading for that realm of consciousness and mind where all wisdoms remind us that it is its shores that make the ocean one, and that it is the plurality of human journeys that shapes the common humanity of men”
This unique plurality of thought grants humankind with a flexible, tolerant and surprisingly a rather powerful insight into a monotheistic reality. It compels humanity to surrender to a belief in one supreme entity responsible for such a beautifully harmonious yet diverse existence. In a single benevolent God.
Again, the concept of unity, oneness becomes an essential prelude to even a slightest semblance of political, social tolerance and justice.
This is where Muslims can play a vital role by providing a flexible, progressive and unifying forum; inviting humanity to unite on equity and justice. A unique assembly of diversity into one for one.
Indeed, thinking of unity and oneness in a world riddled with apartheid, hatred and war sounds simplistic yet often the most complex of problems have simple and obvious solutions if one dares to believe. This is the path that all reformists chose throughout history to lead humankind to peace and progress.
In the beautiful words of Robert Frost:
“I shall be telling this with a sigh
Somewhere ages and ages hence:
Two roads diverged in a wood, and I—
I took the one less traveled by,
And that has made all the difference.”









Sunday, August 13, 2017

درد!

وہ دل کمزور کیونکر ہو
کہ جس میں درد پلتا ہو،
ابھی احساس زندہ ہو۔
اسے میں کیوں کہوں بزدل
جو دل اندھا نہیں ہوتا
جو دل بہرا نہیں ہوتا
کہ جس میں کشفِ یزداں کا
سبب یہ درد بنتا ہو !
یہیں سے جنم لیتا ہے
ہر وہ جوہرِ کارآمد۔
جو پھر آواز بنتا ہے۔
جو پھر انسان بنتا ہے۔
کبھی پھر تم نہ یہ کہنا کہ
درد کمزور کرتا ہے۔
کہ درد ، درد کرتا ہے۔
جو سجدے میں گراتا ہو
درد کرتا بھی ہو تو
اسے نعمت سمجھنا تم
کہ رب کے پاس کرتا ہے
ہمیں انسان رکھتا ہے۔
ثمین صدف

Saturday, July 22, 2017

See the truth:



We are limited, partial beings. Halves, Quarters, thirds of a whole. Never free from being a part. Never isolated, by ourselves.

Often forgetting the whole, we keep focusing on ourselves. We keep trying to become a half when we are a third and a third when we are a quarter.

We forget that with us alone the picture will remain incomplete. Alone we might see a lot of facts but never the whole truth.

It's a fact that x got hurt.
The truth is that X became a better person after all the hurt.

It's a fact that z is independent.
The truth is z has caged himself.

Facts only indicate the obvious of a deeper truth always. Never fall merely for statistics to form opinions. Look deeper.

We can learn to look deeper. More holistically. If we understand natural justice. ADL.عدل

There is much to see and less to say. What can be seen, cannot always be told.

Ask for vision. Try to see the whole. The truth of many facts will become visible.

"There's a world of difference between truth and facts. Facts can obscure truth."
Maya Angelou

Saturday, July 15, 2017

لاشعور:


ماہرِ نفسیات کا کہنا ہے کہ انسانی  ذہن ایک ایسےآئس برگ کی  مانند ہے۔جو آدھے سے زیادہ پانی  میں ڈوبا ہوا ہے اور اُس کی نوک یا چوٹی  جو پانی سے باہر  نظر آ رہی  ہے، انسانی ذہن کے شعور کی نمائندگی کرتی ہے اور باقی ماندہ  آئس برگ جو ڈوبا ہوا ہےاور نظر نہیں آرہا  وہ انسانی ذہن کا وہ حصہ ہے جو لا شعور کہلاتا ہے۔ اس لا لا شعور کا بھی ایک اور مزید  حصہ ہے۔ جو تحت اشعور کہلاتا ہے۔
مزید کہتے ہیں کہ انسان کی شعوری شخصیت اور رویوں کا ۸۰%  دارومدار اسی لا شعور  پر  ہوتا ہے ۔
اس لا شعور کی تعمیر رحمِ مادر میں ہی شروع ہو جاتی ہے اور تقریباً ۷ سال کی عمر تک ایک پختہ بنیاد بن چکی ہوتی ہے۔
وہ تمام رویے/ احساسات جو ایک معصوم جان نے اپنے اندر جزب کر لیئے ہوتے ہیں اس کے لاشعور کا جز بن جاتے ہیں۔
اگر ماں با پ اور ارد گرد کے ماحول میں رنجش اور تناؤ کے احساسات عام ہیں ۔ زندگی کے معملات میں خود غرضی اور غصہ معمول ہیں تو یہ سب کچھ اس ننھے لا شعور میں  ذخیرہ ہورہا ہے اور یہ ضروری نہیں کہ یہ ذخیرہ اوریاداشت جو اس کے اندر محفوظ ہے وہ فوری استعمال میں آئے۔
مثال کے طور پر اگر ماں یا باپ راہ چلتے فقیر کو دھتکاریں گے تو وہ رویہ بچے میں فیڈ ہوگیا۔ اب یہ اور بات ہے کہ ماحول ، تربیت اور اسکول سب اس ذخیرہ کو   استعمال کرنے کا کیا گر سجھاتے ہیں  او ر بچہ  خود کتنا سلیم طبع ہے۔اُس یادشات کا اظہار بھی  کسی منفی روے کی صورت  میں زندگی کے کسی بھی لمحے میں ہو سکتا ہے۔
آجکل کے دور میں رحمِ مادر میں پلنے والا بچہ بموں کے دھماکوں کی آواز پر اپنی ماں کے دل کی دھڑکن کو محسوس کرتا ہے تو اس کے لاشعور میں ان آوازوں کے ساتھ پریشانی فیڈ ہو جاتی ہے۔ یہ ہمارے لئے لمحہ فکریہ ہے ۔ ہم اپنی اگلی نسلوں کو کیسی یادیں اور حافظے دے رہے ہیں۔
لا شعور کی حقیقت کو سمجھنے والے اس کی تربیت کے گر بھی جان جاتےہیں۔
مسلم شہزادیوں کی جب عصمت دری کی گئی تو ان کی  کوکھ سے جنم لینے والے بچے علماء بنے۔اس لیے کہ ان کی ماؤں نے اپنی بہادری اور عزم کو اپنے بچوں میں منتقل کیا۔ اپنے دکھ اور پریشانی کو طاقت میں بدلہ۔ یہ مشکل ضرور ہے مگر ممکن بھی ہے۔
بہرحال کہنے کا مقصد یہ ہے کہ اپنے بچے کی عزت کریں۔ اسے انسان سمجھیں۔ انسان سمجھیں گے تو وہ انسان بن سکتا ہے۔ اپنے اور اس کے لا شعور کی تربیت پر بھی دھیان دیں۔
جس کے لا شعور میں رب کی پہچان اور رضا بس گئی اس کا اظہار انکسار اور عجز میں ضرور ہوگا اور اس کی آج ہماری اُمت میں بڑی قلت ہے۔

The Voice of Silence:



Anyone who has experienced a typical Pakistani wedding can understand why after a few days all different varieties of curries, rice, salads and desserts look and taste the same.

Anyone who has ever held a colour palette in his/her hand would know how all the colours loose their distinct identity once mixed with another colour.

Lately the variety of different intellectual opinions have done just that. To me all the distinctness and difference seems to have merged into a single live, pulsating being. All voices lost in the sound of the chorus.

It doesn't matter really how loud you say it or how good your voice is. It doesn't matter even how right it is.

The only thing that matters now is who succeeds in staying silent.

The voice of silence is often stronger than what  we perceive.

The director in an orchestra is the Master and the master is silent.

Directing the voices.

The chorus has lost direction. It's becoming extremely chaotic. Too much mixing and too many choices are destroying beauty and harmony. Making everyone impatient, frustrated and at war within and without.

We need more directors. More people who have the stamina to stay silent and direct the chorus. Ofcourse that means giving up on ones own voice!

#Havefaith
#Surrender

Friday, June 30, 2017

جاہل کون؟


عجیب سا سوال ہے۔ یعنی جہالت کی بھی قسمیں ہوتی ہیں؟
جی بلکل ہوتی ہے اور آخر کیوں نہ ہوں۔ انسان نے ہر چیز میں ترقی کرلی اور جہالت اُسی پرانے طریق پر۔ یہ بھی کوئی بات ہے!
کسی بھی زمانے میں سب سے بہترین جہلاء بھی اس معاشرے کی کریم سے ہی آتے ہیں۔ آج کل بھی بہترین جہلاء سند یافتہ ہیں۔
جہالت کا اظہار بھی ایسے کرتے ہیں  گویا کمال کرتے ہیں۔
اس فن کے ماہر ین  محض قیاس پر اکتفا نہیں کرتے بلکہ اپنی ہر جہالت کی دلیل لاتے ہیں۔
سبحان اللہ!
جا ہل  بننا لیٹیسٹ فیشن ہے۔ کسی بھی اسکول کالج میں یار دوستوں کی گفتگو سن لیں ۔ لفظ 'جاہل ' کا بے دریغ اور محبت بھرا استعمال  اس بات کی دلیل ہے۔
اس کُل تحریر کا مقصد جہلاء کی اہمیت کو کم کرنا یا خدانخواستہ ان کی تذلیل کرنا ہرگز نہیں۔ بلکہ اس مثبت امر کی طرف توجہ دلانا ہے کہ جب جب کسی قوم میں جہلا ء کی تعداد میں اضافہ ہوجاتا ہے تو انقلاب ضرور آتا ہے۔
ہماری قوم بھی کسی ایسے ہی انقلاب کی منتظر ہے۔
(یہ تحریر کسی اصل انسان  یا انسانوں کو ذہن میں رکھ کر نہیں لکھی گئ۔ حقیقی افراد و واقعات سے مماثلت اتفاقی  ہے۔ برائے مہربانی عالم حضرات اس  تحریر کو پڑھنے اور پھر اس پر تنقید کی کو شِش نہ کریں!)
ثمین صدف

Tuesday, May 16, 2017

نظریاتی اختلاف کا اصل مسئلہ


کسی بھی نظریے کا بنیادی مسئلہ اس امر میں نہیں کہ وہ  جن حقائق سے بحث کرتا ہے وہ غلط ہیں کہ صحیح بلکہ اس کا بنیادی مسئلہ اس امر میں  ہے کہ ان حقائق سے بحث کرنے کے لیے جو طرز فکر اپنایا جاتا ہے وہ تخصیصی  ہے کہ کلی۔
اور چونکہ انسان کُل کا مکمل ادراک نہیں کر سکتا تو دراصل کوئی بھی انسانی نظریہ تب تک محدود رہے گا جب تک وہ ہدایت الٰہی کو اپنا اصل ماخذ نہ بنا لے۔
ہدایتِ الٰہی کو ماخذ بنانے کے بعد جو بھی اختلاف رونما ہو گا اس میں بہرحال اجتماعی خیر متحرک کرنے والے عناصر جب تک زیادہ رہیں گے تب تک انسان کا فکری ارتقاء ایک درست اور مستقل نہج پر جاری رہے گا۔
ایسی صورتِ حال  میں جب ماخذ درست اور مشترک ہو تو انسانوں میں نظریاتی تفاوت تعمیر فکر کا باعث بنتا ہے۔
دونوں طرز فکر یعنی تخصیصی اور کلی کے مظاہر میں تفاوت کا اظہار لطیف ہے۔ تخصیصی فکر کا اظہار و انحصار فرد کے مفاد اور ذوق پر ہو تا ہے۔ جس کی انتہا  انتشار ہے۔
فکرِ کُلی کا اظہار و انحصار افراد کے مفاد اور ذوق پر ہو تا ہے۔  جس کے نتیجے میں ایک خودکار فکری عمل جنم لیتا ہےجو انسانیت کی تعمیر اور ترقی کو ازخود جاری رکھتا ہے۔